بنگالی نژاد امام مسجد کے قتل کے مجرم برطانوی مسلم کو عمر قید کی سزا

طانیہ کے شہر راچڈیل میں ایک مسلمان محمد حسین سعیدی کو بنگالی نژاد امام مسجد کے قتل میں معاون ہونے کے جرم میں عمر قید کی سزا سنادی گئی ہے۔گذشتہ فروری میں راچڈیل کے ایک پارک میں ایک مقامی مسجد کے امام 71 سالہ جلال الدین کو قتل کیا گیا تھا۔اس واقعے میں 21 سالہ محمد حسین سعیدی امام کو پارک میں قتل کے مقصد سے لے کر گئے تھے۔جلال الدین کا تعلق بنگلہ دیش سے تھا اور وہ برطانیہ میں مقیم تھے۔ مانچیسٹر کی عدالت میں سماعت کے دوران عدالت کا کہنا تھا کہ محمد حسین سعیدی کو امام جلال الدین کا ’کالے جادو‘ کے ذریعے روحانی علاج کا طریقہ پسند نہیں تھا۔ عدالت نے انہیں زیادہ سے زیادہ 24 برس تک کے لیے عمر قید کی سزا سنائی ہے۔اس قتل کا ایک اہم ملزم محمد قادر ملک سے فرار ہو کر شام چلا گیا تھا اور خیال کیا جاتا ہے کہ وہ نام نہاد اسلامی تنظیم دولت اسلامیہ میں شامل ہوگیا ہے۔ ہائی کورٹ کے جج سر ڈیوڈ میڈسن نے اپنے فیصلے میں کہا کہ جلال الدین ایک باوقار شخص تھے اور چونکہ ان کے تعویذ کے ذریعے روحانی علاج کے طریقے کو پسند نہیں کیا جاتا تھا اس لیے انہیں قتل کر دیا گا۔ مانچیسٹر یونائیٹڈ کے سابق ملازم محمد حسین سعیدی اپنے دوسرے ساتھی محمد قادر کے ساتھ مل کر جلال الدین کی نقل و حرکت پر نظر رکھتے تھے اور 18 فروری کو جب جلیلیہ مسجد میں نماز کے بعد وہ اپنے ایک دوست سے ملنے جا رہے تھے تبھی ان دونوں نے ان کا پیچھا کیا۔ عدالت نے مو¿قف اختیار کیا کہ محمد حسین سعیدی قتل میں ملوث شخص قادر کو اچھی طرح سے جانتے تھے اور ان کے اس دعوے کو مسترد کر دیا کہ انہیں نہیں معلوم تھا کہ قادر کے کیا منصوبے ہوسکتے ہیں۔ امام مسجد جلال الدین کے چہرے اور سر پر پانچ بار ہتھوڑے سے وار کیا گیا تھا جس سے انہیں شدید چوٹیں آئی تھیں اور بعد میں ہسپتال میں ان کا انتقال ہوگیا تھا۔




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *