killer-man

کیلیفورنیا میں دو نوجوان پاکستانی امریکنز کا بیہیمانہ قتل:کمیونٹی میں خوف و ھراس اور غم وغصہ

نیویارک(رپورٹ:ایم آر فرخ)امریکی ریاست کیلیفورنیا میں دو امریکی پاکستانی نوجوانوں کو قتل کردیا گیا پے درپے دو بیہیمانہ وارداتوں نے پاکستانی کمیونٹی کو تشویش اور دکھ میں مبتلا کردیا ہے. یہ واقعات ایسے وقت میں وقوع پذیر ھوئے ہیں جب ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی کے بعد امریکہ بھر میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز کارروائیوں میں اضافہ ھوا ہے.تفصیلات کے مطابق ایک نوجوان کو لاس اینجلس میں لؤٹ مار کے دوران چھری کے وار سے موت کے گھاٹ اتارا گیا مقتول علی حسنین کو چند ماہ قبل اس کی کمپنی نے نیویارک سے لاس اینجلس بھیجا تھا 26 سالہ علی حسنین نیویارک میں پاکستانی کمیونٹی کی ایک ممتاز شخصیت محترمہ طاہرہ شریف کے صاحبزادے تھے. طاہرہ شریف پاکستانی کمیونٹی آف لانگ آئلینڈ نامی تنظیم کی ڈائریکٹر اور عہدیدار بھی ہیں.علی حسنین پیشے کے اعتبار سے سول انجینئیر تھے انہوں نے نیویارک یونیورسٹی سے امتیازی پوزیشن میں سول انجنیئرنگ کی تعلیم مکمل کی وہ ھمیشہ بہترین طالبعلم کی حیثیت سے کامیابی حاصل کرتے رہے 6 فٹ طویل قامت خوبرو علی حسنین میوزک کمپوزر بھی تھے جب انکی کمپنی یانکرز کنٹریکٹنگ انک نے انہیں لاس اینجلس میں اپنے نئے آفس سنبھالنے کی پیشکش کی تو علی نے اپنی والدہ سے لاس اینجلس منتقل ھونے کی خواہش ظاہر کی کہ اسطرح وہ روزگار کے ساتھ ساتھ اپنے شوق کو پروان دینے کے لئے فلم و میوزک کے گڑھ ھالی ووڈ کے قریب ھوجائیں گے اور انکے لئے میوزک کے میدان میں خود کو منوانا بھی آسان ھوجائے گا. تاھم قسمت کو کچھ اور منظور تھا. اور ذہین اور باصلاحیت نوجوان نامعلوم ڈکیٹ کے ہاتھوں مارا گیا. علی نے لاہور کے مشہور و معروف ایچی سن کالج سے او لیول بھی کر رکھا تھا جس کے لیے انکی والدہ انہیں تین سال کے لئے پاکستان لے گئی تھیں.قتل کی یہ واردات لگ بھگ 6-7 روز قبل پیش آیا مقتول کی والدہ کو جب کئی دن تک جواں سال بیٹے کی کوئی خیر خبر نہ ملی تو پریشانی کے علم میں وہ لاس اینجلس پہنچ گئیں جہاں کافی تلاش تھانوں اور ہسپتالوں سے رابطوں کے بعد طاہرہ کو ان کا بیٹا بلآخر مل گیا مگر نہ تو وہ اس سے اتنے دن غائب رہنے کی وجہ پوچھ سکتی تھیں نہ ہی ان پر غصہ کرسکتی تھیں کیونکہ انہیں انکا بیٹا نہیں بلکہ اسکی لاش ملی تھی. طاہرہ شریف کے دو بیٹے ہیں ان میں سے ایک اب اس دنیا میں نہیں رہا جبکہ دوسرا انکے ساتھ رہتا ہے.طاہرہ شریف اپنے نوجوان بیٹے کی میت کے ساتھ نیویارک پہنچ رہی ہیں جہاں جمعہ کے روز لانگ آئلینڈ کے علاقے میں واقع ایک وسیع وعریض اسلامک سینٹر لانگ آئلینڈ اسلامک سینٹر میں جمعہ کی نماز کے بعد نماز جنازہ ادا کی جائے گی اسکے فوری بعد واشنگٹن میموریل قبرستان میں علی حسنین کی تدفین ھوگی.قتل کا دوسرا واقعہ کیلیفورنیا کے ہی شہر سکرامنٹو میں پیش آیا جہاں ایک نوجوان امریکی پاکستانی ایک انجانی گولی کا نشانہ بن گیا پولیس تفتیش میں مصروف ہے تاھم اب تک یہ معلوم نہیں ھوسکا کہ نوجوان کو گولی کس نے ماری. سکرامنٹو میں ان دنوں ڈرگ اور دیگر جرائم میں اچانک اضافہ ھوا ہے خیال کیا جاتا ہے کہ مذکورہ نوجوان دو گینگز کے درمیان جھڑپوں کے دوران کسی نامعلوم سمت سے آنے والی گولی کا نشانہ بنا ہے. پولیس کا خیال ہےفائرنگ قریب سے کی گئی تھی گولی بدقسمت نوجوان کے پیٹ میں لگی اور جائے واقعہ پر ہی اسکی موت واقع ھوگئی. دونوں نوجوانوں کے قتل کا مسلمانوں کے خلاف اشتعال انگیزی سے بظاہر کوئی تعلق نہیں مگر یہ واقعات جیسے وقت اور حالات میں رونما ہوئے ہیں تشویش کا پایا جانا فطری امر ہے کیونکہ امریکی مسلمان اور پاکستانی ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی کے بعد امریکہ میں مسلمانوں کو محفوظ تصور نہیں کررہے ہیں.




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *