آر ایل این جی ٹرمینل کے معاہدے میں سنگین بے قاعدگیوں کی نشاندہی

 کراچی: 

آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے ایل این جی کی درآمد کے لیے اینگرو ایلنجی ٹرمینل پاکستان لمیٹڈ اور سوئی سدرن گیس کمپنی کے مابین طے کیے گئے معاہدے میں سنگین بے قاعدگیوں کی نشاندہی کرتے ہوئے اسے سوئی سدرن گیس کمپنی کے لیے خسارے کا سودا قرار دے دیا ہے۔

نجی کمپنی اینگرو ایلنجی ٹرمینل پاکستان لمیٹڈ 125 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری سے لگایا گیا تاہم اس معاہدے کے نتیجے میں سوئی سدرن گیس کمپنی کی آمدن میں کوئی اضافہ نہ ہوسکا بلکہ مارچ تا دسمبر 2015کے دوران صرف 10 ماہ کی مدت میں 83.924 ملین ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا۔

آڈیٹر جنرل کی رپورٹ برائے سال 2015-16کے مطابق ری گیسیفائڈ ایل این جی کی درآمد کے لیے کیے گئے معاہدے میں بے ضابطگیوں اور سروس ایگریمنٹ کی شرائط پوری نہ کیے جانے سے سوئی سدرن گیس کمپنی کو کم وبیش9ارب روپے کے نقصان کا سامنا کرنا پڑا۔




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *