792086-bomb-1492104712-184-640x480

امریکا نے پہلی مرتبہ افغانستان میں نان نیوکلئیر بم گرا دیا

792086-bomb-1492104712-184-640x480واشنگٹن: امریکا نے افغانستان میں 16 سالہ جنگ کے دوران پہلی مرتبہ نان نیوکلئیر بم کا استعمال کیا جس کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک ہوگئے۔
پینٹاگون کے ترجمان ایڈم اسٹمپ کے مطابق امریکی فوج نے پہلی مرتبہ افغانستان میں نان نیوکلئیر بم کا استعمال کیا جسے داعش کے ٹھکانے کو نشانہ بنانے کے لئے استعمال کیا گیا۔ ترجمان کے مطابق افغانستان کے صوبہ ننگرہار کے ضلع ایچن کی پہاڑیوں پر 11 ٹن بارودی مواد سے لیس جی بی یو 43 نامی بم سے داعش کے ٹھکانے کو نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں 36 افراد ہلاک ہوگئے۔
پینٹاگون کے مطابق نان نیوکلئیر بم کا مختصر نام ’’مدر آف آل بمز‘‘ ہے جب کہ فضائیہ میں اسے میسو آرڈیننس ایئر بلاسٹ بم کہا جاتا ہے۔

امریکا نے جی بی یو 43 بم کا عراق جنگ سے قبل 2003 میں پہلی مرتبہ کامیاب تجربہ کیا تھا جس کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ تجربے کے دوران 32 کلومیٹر دور تک آسمان پر گہرے بادل چھا گئے تھے تاہم افغانستان میں بم کے گرائے جانے کے بعد ابتدائی طور پر کسی بھی نقصان کے حوالے سے آگاہ نہیں کیا گیا۔ جی بی یو 43 بم 9 ہزار 797 کلو گرام وزنی ہے جسے کار گو طیارے سی 130 کے ذریعے ضلع ایچن کی پہاڑیوں پر گرایا گیا۔
دوسری جانب افغانستان میں امریکی فوج کے کمانڈر جنرل جان نکلسن کا کہنا ہے کہ نان نیوکلیئر بم پہاڑیوں پر داعش کے ٹھکانوں پر گرایا گیا اور داعش کے خلاف جارحانہ اقدامات اور رکاوٹوں کو دور کرنے کے لئے یہ مناسب قدم ہے۔




Leave a Reply