سنجے دت سنی لیون کے ساتھ کام کرنے کے خواہشمند

فلم ’’بھومی‘‘ کے ہدایت کاراومنگ کمارکا کہنا ہے کہ سنجےدت بھارتی شوبز انڈسٹری کی آئٹم گرل سنی لیون کے ساتھ آئٹم نمبر ’’ٹرپی ٹرپی‘‘ میں پرفارم کرنے کے خواہشمند تھے تاہم انہیں بڑی مشکل سے باز رکھا۔
بالی ووڈ کی بے باک اور بولڈ اداکارہ سنی لیون کے ساتھ کام تو تمام اداکار کرنا چاہتے ہیں لیکن اس بات کو کوئی بھی برملا اظہار نہیں کرتا ، تاہم سنجے دت نے نہ صرف سنی لیون کے ساتھ کام کرنے کی خواہش کا اظہار کیا بلکہ وہ اس بات پر اڑ گئے کہ وہ کم سے کم ایک گانے میں تو ان کے ساتھ پرفارم کریں گے تاہم ہدایت کار اومنگ کمار نے بڑی مشکلوں سے سنجے دت کو باز رکھا کیونکہ فلم کی کہانی کا تقاضا یہ تھا کہ وہ گانے میں شامل نہ ہوں۔
اس خبرکوبھی پڑھیں: بیوی مجھے جوتوں سے مارتی ہے
برطانوی میڈیا کے مطابق سنی لیون کا شمار بالی ووڈ کی مشہور اداکاراؤں میں ہوتا ہے لیکن وہ آج تک کسی بھی فلم میں بڑا اور مرکزی کردار حاصل کرنے میں ناکام رہی ہیں اورفلموں میں صرف آئٹم نمبرز یا چھوٹے موٹے کردار ہی ادا کرتی ہیں، فلم ’’بھومی‘‘ کے ہدایت کار اُمنگ کمار سے جب اس بارے میں پوچھا گیا کہ سنی لیون کے ساتھ کوئی بھی کام کرنے کے لیے تیار نہیں کیا بالی ووڈ اداکاروں کو ان کے ساتھ کام کرنے میں شرم آتی ہے؟
اس سوال کے جواب میں اومنگ کمار نے کہا کہ جو لوگ اس طرح سوچتے ہیں وہ دوہرے معیار کے مالک ہوتے ہیں ایسا بالکل بھی نہیں ہے کہ کوئی ان کے ساتھ کام کرنا نہیں چاہتا وہ ایک باصلاحیت اداکارہ ہیں یہاں تک کہ بالی ووڈ کے صف اول کے اداکارعامر خان بھی ان کے ساتھ کام کرنے کی خواہش کا اظہار کرچکے ہیں اور سنجے دت نے خود مجھ سے سنی لیون کے ساتھ گانے میں پرفارم کرنے کی بات کی تھی۔
اس خبرکوبھی پڑھیں: سنجے دت کی فلم ’’بھومی‘‘ ریلیز سے قبل مشکلات کا شکار
دراصل فلم میں سنجے دت کا کوئی گانا شامل نہیں لہٰذا انہوں نے مجھ سے کہا کہ میرا فلم میں ایک بھی گانا نہیں ہے میں ’’ٹرپی ٹرپی‘‘ میں سنی لیون کے پیچھے سے نکل جاؤں گا بس مجھے گانے میں لے لو، ان کی یہ بات سن کر میں گھبرا گیا کیونکہ فلم کی کہانی کے مطابق سنجے دت کا کردار نہایت سنجیدہ ہے اور کردار کی ڈیمانڈ کے مطابق ان کاکوئی گانا فلم میں شامل نہیں،لہٰذا مجھے انہیں سمجھانا پڑا کہ آپ سنی لیون کے ساتھ گانے میں شامل نہیں ہوسکتے۔




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *