150 روسی کمپنیوں کو پاکستان میں مواقع کی تلاش

کراچی: رشین فیڈریشن کے تجارتی نمائندے یورے کوزلو نے کراچی چیمبر کے دورے کے موقع پر کہا ہے کہ پاکستان اور روس کے درمیان تجارت و سرمایہ کاری کے تعاون میں اگرچہ بہتری رونما ہوئی ہے لیکن یہ بہتری اس وقت تک مستحکم نہیں ہوسکتی کہ جب تک دونوں ممالک اپنی اپنی معیشت کے مختلف شعبوں میں تعاون کے مواقع تلاش نہ کریں۔
یورے کوزلو نے کہاکہ روس توانائی کے شعبے، تعمیرات و صنعتی مشینری، کان کنی، ریلویز انجینئرنگ، فارماسیوٹیکل مصنوعات، طبی آلات، ایل ای ڈی لائٹ سسٹم، فرٹیلائزر و کیمیکلز، واٹر مینجمنٹ، ایری گیشن کی سہولت، خودکار ہوائی جہاز، ڈرونز وغذائی اشیا سمیت دیگر شعبوں میں تجارت اور سرمایہ کاری کو فروغ دینے کا خواہش مند ہے، دونوں ملکوں کے مابین تجارتی وفود کے تبادلے میں بہتری آئی ہے لیکن تجارت و سرمایہ کاری کے فروغ کے لیے مزید تجارتی وفود کے تبادلے کی ضرورت ہے۔
انہوں نے کراچی چیمبر کو مشورہ دیا کہ روسی تاجروں کے ساتھ دوطرفہ تجارت کو فروغ دینے اورتجارت کی راہیں تلاش کرنے کے لیے روس کے دورے کے لیے تجارتی وفد تشکیل دے۔ انہوں نے کراچی چیمبر کی جانب سے دونوں ملکوں کے درمیان براہ راست بینکنگ سہولت نہ ہونے سے تجارت میں رکاوٹ کو دور کرنے پر اتفاق کرتے ہوئے کہاکہ براہ راست بینکنگ سہولت کا نہ ہونا واقعی مسئلہ ہے جس پر دونوں جانب سے توجہ دی جانی چاہیے۔




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *